امریکہ میں کورونا وائرس کی تباہ کاریوں میں ہولناک اضافہ

گزشتہ 24 گھنٹوں میں مزید 1 ہزار 480 افراد ہلاک۔ ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 7 ہزار 392 ہو گئی

واشنگٹن (تیز ترین) امریکہ میں کرونا وائرس کی تباہ کاریاں جاری ہیں۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں مزید 1 ہزار 480 افراد ہلاک، ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 7 ہزار 392 ہو گئی۔ 32 ہزار 284 نئے کیسز رپورٹ ہونے کے بعد متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 2 لاکھ 77 ہزار سے بھی تجاوز کر گئی۔ تفصیلات کے مطابق امریکہ میں مسلسل تیسرے روز بھی ایک ہزار سے زائد ہلاکتیں ریکارد کی گئی ہیں۔ جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد بڑھ کر 7 ہزار 392 ہو چکی ہے۔ خبر ایجنسی کے مطابق امریکہ میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں 1 ہزار 480 افراد مہلک وائرس کے باعث جان کی بازی ہار گئے۔ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق امریکہ میں اس وقت کرونا سے متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 2 لاکھ 77 ہزار 161 ہے، جبکہ وائرس کا شکار ہونے کے بعد صحت یاب ہوجانے والے امریکی شہریوں کی تعداد 12 ہزار 283 ریکارڈ کی گئی ہے۔

امریکہ میں اس وقت اڑھائی لاکھ سے زائد مریض زیر علاج ہیں، جن میں 5 ہزار 787 مریض ایسے ہیں جن کی حالت انتہائی تشویشناک بتائی جا رہی ہے۔ گزِشتہ کل امریکہ میں 1 ہزارسے زائد اموات واقع ہوئی تھیں۔ جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 6 ہزار 88 ہو گئی تھی۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق سب سے زیادہ ہلاکتیں نیویارک میں ہوئی ہیں۔ رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ نیو یارک کے مئیر نے گھر سے نکلنے والے تمام افراد کو ماسک پہننے کی ہدایت کی ہے،اور یہ امکان ظاہر کیا گیا ہے کہ یہی ہدایت وائٹ ہاوس کی جانب سے اب پورے امریکہ میں بھی جاری کر دی جائے گی۔

Screenshot 7

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق وائرس نے امریکہ میں ایک کروڑ افراد کو بے روزگار بھی کر دیا ہے۔ میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ بحری بیڑے پر وباء پھیلنے سے روکنے میں حکام کی ناکامی کا پردہ فاش کرنے والے کمانڈر بریٹ کروزئیر کو جبری ریٹائر کر دیا گیا ہے۔  امریکی میڈیا کے مطابق صدارتی امیدوار کی نامزدگی کے لیے ڈیموکریٹس نے نیشنل کنونشن ملتوی کر دیا ہے۔ علاوہ ازیں امریکی صدر ڈونل ٹرمپ نے دوسری بار بھی اپنا کورونا وائرس کا ٹیسٹ کروایا جس کے نتائج بھی منفی ہی نکلے۔ اپنے ایک بیان میں صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ان کو دوسرا ٹیسٹ تیز ترین طریقے سے کیا گیا جس کی رپورٹس محض 15 منٹ میں موصول ہو گئیں۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.