سندھ حکومت نے مساجد میں نماز کے اجتماعات پر عائد پابندی میں نرمی کرنے کا عندیہ دے دیا۔

چودہ اپریل کے بعد لاک ڈاون میں مزید سختی یا نرمی کے حوالے سے فیصلہ کیا جائے گا۔ سب سے پہلا ریلیف مساجد اور امام بارگاہوں کو دیا جائے گا۔ صوبائی وزیر ناصر حسین شاہ

کراچی (تیز ترین)  سندھ حکومت نے مساجد میں نماز کے اجتماعات پر عائد پابندی میں نرمی کرنے کا اشارہ دے دیا۔ صوبائی وزیر ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ 14 اپریل کے بعد لاک ڈاون میں مزید سختی یا نرمی کے حوالے سے فیصلہ کیا جاسکے گا۔ سب سے پہلا ریلیف مساجد اور امام بارگاہوں کو دیا جائے گا۔ تفصیلات کے مطابق سندھ کے سینئر وزیر ناصر حسین شاہ کی جانب سے کہا گیا ہے کہ کل جمعہ کے دن صوبے بھر میں لاک ڈاون کی پابندی پر سختی سے عملدرآمد کروایا جائے گا۔ مساجد میں نماز جمعہ کے اجتماع میں لوگوں کی شرکت پر پابندی عائد ہے۔ ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ صوبے میں لاک ڈاون نافذ کیے جانے کے بعد سے صورتحال میں بہتری آئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ 14 تاریخ کو صوبائی کابینہ مل بیٹھے گی اور لاک ڈاون میں مزید اضافے یا نرمی کے حوالے سے فیصلہ کیا جائے گا۔ صوبائی وزیر نے کہا ہے کہ 14 تاریخ کے بعد سب سے پہلا ریلیف مساجد اور امام بارگاہوں کو دیا جائے گا۔ دوسری جانب وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے متعلقہ حکام کو لاک ڈاؤن مزید سخت کرنے کی ہدایت دیتے ہوئے عوام سے اپیل کی ہے، کہ آپ احتیاط کریں ، اگر ہم اپنی مدد آپ نہیں کریں گے تو ہماری مدد بھی کوئی نہیں کرے گا۔ بدھ کو جاری اعلامیہ کے مطابق وزیراعلی سندھ نے کہا ہے کہ 50 نئے کیس سامنے آنے کے بعد صوبے بھر میں وائرس سے متاثرہ مریضوں کی مجموعی تعداد 1036 ہوگئی ہے۔ وزیراعلی سندھ نے مزید بتایا ہے کہ بدھ کو کرونا کے مرض میں مبتلا مزید دو افراد فوت ہوگئے، جبکہ اس وباء کے باعث اب تک صوبہ میں 20 اموات ہوچکی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ہم نے گذشتہ 24 گھنٹوں میں 758 ٹیسٹ کئے ہیں۔ اب تک ہونے والے ٹیسٹوں کی مجموعی تعداد 10981 ہوگئی ہے ۔ مراد علی شاہ نے کہا کہ 382 مریض گھروں میں آئیسولیشن میں ہیں اور 97 مریض دیگر مختلف آئیسولیشن سینٹرز میں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا ہم ٹیسٹ کرنے کی صلاحیت کو بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.