2013 کے انتخابات میں دھاندلی کا الزام غلط تھا۔ جہانگیر ترین

66 فیصد حلقوں سے ہمیں 20 فیصد ووٹ بھی نہیں پڑے تھے۔ ہم نے ویسے ہی دھاندلی کا شور مچانا غلط تھا۔ رہنما پاکستان تحریکِ انصاف

اسلام آباد ( تیز ترین) رہنما تحریکِ انصاف کا کہنا ہے کہ 2013 کے انتخابات میں دھاندلی نہیں ہوئی تھی۔ 66 فیصد حلقوں سے ہمیں 20 فیصد  ووٹ بھی نہیں ملے تھے۔ ہمارا دھاندلی کا الزام غلط تھا۔ انہوں نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ 2013 کے الیکشن میں ہمیں بہت بری شکست ہوئی تھی۔ جہانگیر ترین نے کہا کہ میں نے تب ہی وزیراعظم عمران خان کو کہا تھا کہ ہم الیکشن نہیں جیت سکتے، کیونکہ ہمارے امیدوار سیاسی خاندانوں کے نہیں ہیں. انہوں نے کہا پاکستان میں الیکشن سیاسی خاندانوں سے جیتا جاتا ہے. انہوں نے بتایا کہ 2018کے الیکشن میں ہمارے وہی امیدوار جیتے ہیں جو 2013کے الیکشن کے بعد پارٹی میں آئے تھے۔ . جہانگیر ترین نے بتایا کہ جب ہم پنجاب سے جیتے تو ہم نے شکر ادا کیا کیونکہ زیادہ تر لوگوں کا یہی کہنا تھا کہ ہم وفاق میں جیت بھی گئے تو پنجاب میں پی ٹی آئی کی جیت ناممکن ہوگی. انہوں نے کہا کہ تحریکِ انصاف میں زیادہ تر لوگ اسی لیے انکے خلاف ہیں کیونکہ انہوں نے سیاسی خاندانوں کو پارٹی میں لانے کی بات کی تھی۔ پارٹی کے بہت سے لوگ سمجھتے تھے کہ میں نظریے کے خلاف ہوں. انہوں نے مزید بتایا کہ میں نےوزیراعظم عمران خان کو بتایا تھا کہ وزارتِ عظمی کی مالا کا ایک ایک موتی چن کے لانا پڑتا ہے اور اس کیلئے ہم نئے لوگوں کو لے کر آئے. ایک سوال کے جواب میں انہوں نے اعتراف کیا کہ بہت سے امیدواروں کو وہ خود توڑ کر پی ٹی آئی میں لائے۔ معروف صحافی عبدالقادر نے دعویٰ کیا ہے کہ  جہانگیر ترین اور عمران خان کے درمیان تعلقات ٹھیک ہوتے نظر نہیں آرہے، رہنما تحریک انصاف جہانگیرترین نے عمران خان سے ملاقات کی کوشش کی لیکن عمران خان نے ملاقات سے انکار کر دیا ۔ ۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.