کورونا کی ویکسین بنانے کا دعویٰ کرنے والی یونیورسٹی نے دوا کی قیمت مناسب ہونے کا عندیہ دے دیا۔

کورونا کی ویکسین کی قیمت خناق اور ریبیز کی دوا جتنی ہی ہوگی۔ ماہر ڈاؤ یونیورسٹی ڈاکٹر شوکت علی

لاہور ( تیز ترین ) ڈاؤ یونیورسٹی کی تحقیقاتی لیبارٹری نے کورونا کی دوا تیار کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔ ڈاؤ یونیورسٹی کے ڈاکٹر شوکتِ علی کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کا علاج زیادہ مہنگا نہیں ہوگا۔ کورونا کے لیے دوا کی قیمت خناق اور ریبیز کی ویکسین جیسی ہی ہوگی۔ نجی ٹی وی چینل سے گفتگو میں انھوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے علاج کے لیے صحت یاب مریضوں سے اینٹی باڈیز حاصل کی گئی ہیں۔ کرونا وائرس کے علاج کے لئے سیفٹی اسٹڈی جانور پر کی گئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم اس مرحلے پر پہنچ گئے ہیں کہ صحتیاب مریض کے پلازمہ سے اینٹی باڈیز الگ کر سکتے ہیں۔ ڈاکٹر شوکت نے کہا ہے کہ اینٹی باڈیز کو مزید شفاف بنا کر فارمولیشن بنا سکتے ہیں۔ ڈاکٹر شوکت علی نے مزید کہا کہ ہمیں ریگولیٹر اور صحت یاب مریضوں سے تعاون درکار ہوگا۔ ہم کورونا وائرس کی دوائی کے لیے ریگولیٹرز کی شرائط سے بھی آگاہ ہیں۔جبکہ کوشش ہے ریگولیٹر کی ضرورت جو بھی ہو اس کی تعمیل کرسکیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کوشش ہے ڈریپ کی ممکنہ مطلوبہ ضروریات پہلے ہی مکمل کرلی جائیں۔ کورونا کے علاج کے لیے خام مال صحت یاب مریض کا پلازمہ ہوگا۔ دوا کی تیاری صحتیاب مریضوں کے خون کی دستیابی پر منحصر ہے۔ یہاں یہ امر قابلِ ذکر ہے کہ ڈاؤ یونیورسٹی کی تحقیقاتی لیبارٹری نے کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی دوا تیار کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔ وائس چانسلر ڈاؤ یونیورسٹی پروفیسر سعید قریشی کے مطابق کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں پاکستانی سائنسدانوں نے اہم کامیابی حاصل کر لی ہے۔ ڈاؤیونیورسٹی کی ریسرچ ٹیم نے کورونا کے صحتیاب مریضوں کے خون سے حاصل شدہ اینٹی باڈیز سے انٹرا وینیس امیونو گلوبیولن( آئی وی آئی جی ) تیار کرلی۔ ریسرچ ٹیم کی تیار کردہ آئی وی آئی جی کے ذریعے کورونا متاثرین کا علاج کیا جاسکے گا۔ وائس چانسلر پروفیسر محمد سعید قریشی نے کرونا کے خلاف جنگ میں اسے ایک انتہائی اہم کامیابی قرار دیا ہے۔ ڈاؤ کالج آف بائیو ٹیکنا لوجی کے پرنسپل پروفیسر شوکت علی ریسرچ ٹیم کے سربراہ ہیں۔ دنیا میں پہلی مرتبہ کورونا کے علاج کیلیے ریسرچ ٹیم نے امیونوگلوبیولن کامؤثر طریقہ اختیار کرنے کی تیاری مکمل کرلی ہے۔ امریکی ادارے ایف ڈی اے سے منظورشد ہ یہ طریق علاج محفوظ اور کورونا کے خلاف انتہائی مؤثر ہے۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.