بنگلہ دیش میں کرونا کے باعث پابندی کے باوجود ایک لاکھ افراد کی جنازے میں شرکت، حکومتی عہدیدارپریشان۔

چند درجن اہلکارتھے جو ہزاروں افراد کے سمندر کے آگے بے بس تھے، اس لیے کچھ نہیں کر سکے۔ پولیس اہلکار کی گفتگو

ڈھاکہ ( تیز ترین ) مجمع پر پابندی اور جزوی لاک ڈاؤن نافذ ہونے کے باوجود بنگلہ دیش میں ایک مذہبی رہنما کی نماز جنازہ میں کم از کم ایک لاکھ افراد کی شرکت سے پولیس اور حکومتی عہدیدار پریشان ہوگئے۔ کرونا وباء کے باعث بنگلہ دیش میں مساجد میں بھی بہت سارے افراد کے جمع ہونے کی اجازت نہیں ، تفریحی و عوامی مقامات بھ بند ہیں۔ ملک بھر میں گزشتہ ماہ مارچ کے وسط سے نافذ جزوی لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی کرنے والوں کوپولیس والے گرفتار بھی کرتے ہیں۔ تاہم ایک جنازے میں ایک لاکھ افراد کے شریک ہونے پر خود سیکیورٹی ادارے اور حکومت بھیپریشان ہو کر رہ گئی۔ ۔ترک میڈیا کے مطابق بنگلہ دیش کی مذہبی جماعت خلافت مجلس کے نائب سربراہ و معروف عالم دین زبیر احمد انصاری کی نماز جنازہ میں کم از کم ایک لاکھ افراد نے شرکت کی۔ زبیر احمد انصاری 16 اور 17 اپریل کی درمیانی شب فوت ہوئے تھے اور ان کی نماز جنازہ جمعہ کے درمیان رکھی گئی تھی۔ پولیس افسر کے مطابق وہ عالم دین کے اہل خانہ سے رابطے میں تھے۔ جنہیں زیادہ سے زیادہ 50 افراد کو جنازے میں آنے کیلئے راضی کیا گیا تھا، لیکن دیکھتے ہی دیکھتے نماز جنازہ کے مقام پر بہت بڑی تعداد میں لوگ جمع ہونا شروع ہوگئے۔پولیس کے مطابق چند درجن اہلکار ہزاروں افراد کے سمندر کے آگے بے بس تھے، اس لیے وہ کچھ نہیں کر سکے اور وہ وہاں پر ایک لاکھ افراد کو دیکھ کربے بس ہو گئے۔ تاہم بعض رپورٹس کے مطابق جنازے میں شرکت والے افراد کی تعداد ایک لاکھ سے بھی زیادہ تھی۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.