سعودی عرب میں کرونا وباء سے بچاؤکی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے غیر ملکی مُلک بدر کئے جائیں گے۔

ملک بدرکئے جانے والوں کوسزا پوری ہونے کے بعد بھی دوبارہ ملک میں کبھی داخلے کی اجازت نہیں ہوگی

ریاض ( تیزترین)  سعودی عرب کی  حکومت نے کورونا کی روک تھام کے لیے سخت ترین قوانین وضح کردئیے۔ عرب میڈیا کے مطابق سعودی وزارت داخلہ نے سماجی فاصلہ رکھنے کے لیے سخت ترین قوانین وضح کئے ہیں۔ مجمع اکٹھا کرنے، مالز اور دکانوں کے باہر جمع ہونے پر بھی پابندی عائد کردی گئی ہے۔سعودی وزارت داخلہ کے مطابق سعودی عرب میں موجود غیر ملکی شہریوں کی جانب سے قوانین کی خلاف ورزی کی صورت میں انہیں ملک بدر کیا جائے گا، اور سزا پوری ہونے کے بعد بھی انہیں ملک میں کبھی داخلے کی اجازت نہیں ہوگی۔
وزارت داخلہ کے ترجمان نے سماجی فاصلوں کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ ملک میں کورونا وباء کے دوران پانچ سے زائد افراد کے ایک جگہ جمع ہونے پر پابندی عائد کی گئی ہے۔ وزارت داخلہ کے مطابق دکان میں مقررہ تعداد سے زیادہ افراد ہونے کی صورت میں فی دکاندار کو5000  سعودی ریال جرمانہ کیا جائے گا۔ دوسری بار خلاف ورزی کی صورت میں جرمانہ ڈبل اور تیسری بار میں  جرمانہ تین گنا کیا جائے گا۔ سعودی وزارت داخلہ کے مطابق اگر پرائیویٹ سیکٹر کی جانب سے قوانین کی خلاف ورزی کی گئی تو اسے تین ماہ کیلئے بند کردیا جائیگا۔ دوسری بار خلاف ورزی کی صورت میں اسے چھ ماہ کے لیے بند کیا جائے گا۔ ترجمان وزارت داخلہ کے مطابق اگر کوئی شخص عوامی اجتماع میں شرکت کرے گا یا پھر عوامی اجتماع کا انعقاد کرے گا تو اسے قوانین کی خلاف ورزی تصور کیا جائے گا جس پر انہیں جرمانے کے ساتھ سخت سزائیں دی جائیں گی۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.