چینی فوج کا لداخ میں 60 کلومیٹر تک کے علاقے پر قبضہ

بھارت پر سکتہ طاری، کانگریس کہہ رہی ہے کہ چین ہمارے لداخ کے بڑے حصے پر قبضہ کر چکا ہے۔ سینئر صحافی چوہدری غلام حسین

لداخ ( تیز ترین ) چینی فوج نے لداخ میں 40 سے 60 کلومیٹر تک کے علاقے پر قبضہ کر لیا۔ سینئر صحافی چوہدری غلام حسین کا کہنا ہے کہ بھارت پہ سکتہ طاری ہے۔ کانگریس کہہ رہی ہے کہ چین ہمارے لداخ کے بڑے حصے پر قبضہ کر چکا ہے۔
تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی چوہدری غلام حسین کا کہنا ہے کہ چین کیساتھ حالیہ سرحدی تنازعے کے بعد بھارت پہ سکتہ طاری ہے۔ ۔نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے چوہدری غلام حسین کا کہنا تھا کہ بھارت کی حکمراں جماعت بی جے پی اس وقت شدید دباؤ میں ہے۔ اپوزیشن جماعت کانگریس یہ دعویٰ کر رہی ہے کہ چین کی فوج بھارت کے علاقے لداخ کے تقریباً 40 سے 60 کلومیٹر کے علاقے پر قبضہ کر چکی ہے۔
چینی فوج کے منہ توڑ جواب کے بعد بھارت اس وقت بری طرح حواس باختہ ہے۔ بھارت کی جانب سے چین  سے منتیں کی جا رہی ہیں کہ سرحدی تنازعہ کو بات چیت کے ذریعے حل کیا جائے۔
چینی فضائیہ نے بھی لداخ کے قریب اپنے ایئر بس میں توسیع کردی اور لڑاکا طیارے وہاں پہنچا دئے ہیں۔ لداخ میں صورتحال کشیدہ ہے۔ چین لداخ میں متنازع سڑک پر پل کی تعمیر روکنا چاہتا ہے۔ چین نے ائیرپورٹ پر ملٹری قوت میں اضافہ کرلیا۔ لداخ میں بھارتی فوجیوں کی تعداد میں بھی اضافہ کر دیا گیا۔ گولوان وادی کے تین پوائنٹس اور پینگانگ جھیل پر بھارتی اور چینی فوجی آمنے سامنے ہیں۔ لداخ کے علاقے میں  بھارت  اور  چین  تنازع شروع ہوئے 2 ہفتے سے زائد وقت گزر چکا ہے۔ بھارت نے اپنے توسیع پسندانہ غیر قانونی مقاصد پورے کرنے کےلئے پہلے نیپال کے ساتھ سرحدی تنازع شروع کیا، تاہم جب چین کے ساتھ جھڑپیں شروع کیں تو بھارت کو بھرپور جواب ملا جس پر بھارتی فوجیں پسپائی پر مجبور ہوئیں۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.