سندھ حکومت کی طرف سے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 15 فیصد تک اضافے کا فیصلہ

صوبے میں کام کرنے والے وفاقی حکومت کے ملازمین فیصلے سے مسفید نہیں ہوسکیں گے۔

اسلام آباد ( تیز ترین) سندھ حکومت نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 15 فیصد تک اضافے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ صوبائی حکومت کے ملازمین کی تنخواہوں میں 10 تا 15 فیصد اضافے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق مشکل مالی حالات کے باوجود سندھ حکومت نے صوبائی حکومت کے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کا فیصلہ کیا ہے، تاہم صوبے میں کام کرنے والے وفاقی حکومت کے ملازمین اس فیصلے سے مستفید نہیں ہوسکیں گے۔ وفاقی حکومت نے سالانہ بجٹ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہیں نہ بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے، لیکن اب سندھ حکونت نے ملازمین کی تنخواہیں 10 سے 15 فیصد بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے۔ جب کہ سالانہ وفاقی بجٹ میں تنخواہوں اور پنشنز میں اضافہ نہ ہونے پر پریشان سرکاری ملازمین کے لئے اچھی خبر آئی ہے کہ وزارتِ خزانہ نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں اضافے کا عندیہ دے دیا ہے۔
نجی ٹی وی چینل نے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ وزارتِ خزانہ نے تنخواہوں اور پنشن میں اضافے کے حوالے سے بتایا ہے کہ حالات بہتر ہونے پر اضافہ کیا جائے گا۔ وزارتِ خزانہ کا کہنا ہے کہ معاشی حالات بہتر ہونے کی صورت میں تنخواہیں اور پنشن بڑھائی جاسکتی ہے، جب کہ آئی ایم ایف نے بھی اسکی حمایت کی ہے۔ آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ حالات بہتر ہو جائیں تو حکومت درآمدات میں پانچ فیصد سرچارج لگا کر پیسے اکٹھے کر سکتی ہے، جس سے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔
یہ اضافہ منی بجٹ میں کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ پنجاب میں وزارتِ خزانہ نے ملازمین کی تنخواہوں میں 10 فیصد کٹوتی کی تجویز دی تھی، جسے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے مسترد کردیا ہے۔ پنجاب حکومت اپنا بجٹ سوموار کو پیش کرنے جارہی ہے۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.