امریکہ کا ہیوسٹن میں چینی قونصل خانہ بند کرنے کا فیصلہ، چین نے جوابی کارروائی کی دھمکی دے دی۔

امریکہ کی وزارتِ خارجہ کا کہنا ہے کہ اس فیصلے کا مقصد امریکہ کی انٹیلیکچؤل پراپرٹی کا تحفظ کرنا ہے۔

واشنگٹن ( تز ترین ) امریکہ نے چین سے کہا ہے کہ وہ ٹیکساس کے شہر ہیوسٹن میں اپنا قونصل خانہ بند کر دے۔ امریکہ کا کہنا ہے کہ اسے اس فیصلے پر چینی سیاسی اقدامات نے اکسایا ہے۔ امریکہ کی وزارتِ خارجہ کا کہنا ہے کہ اس فیصلے کا مقصد ‘امریکہ کی انٹیلیکچؤل پراپرٹی کا تحفظ کرنا ہے”۔
چین کی وزارتِ خارجہ کے ترجمان وینگ وینبن کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ اشتعال انگیز اور بلا جواز ہے۔ کچھ نامعلوم افراد کی فلم بنائے جانے کے بعد یہ بیانات سامنے آئے ہیں۔ یہ افراد قونصل خانے کے صحن میں کاغذات جلا رہے تھے۔ امریکہ اور چین کے درمیان کچھ عرصے سے کشیدگی میں اضافہ ہو رہا ہے۔ تجارت اور کرونا وائرس کی وباء سے متعلق معاملات پر صدر ٹرمپ کی انتظامیہ چین کے ساتھ کئی مرتبہ جھگڑ چکی ہے۔ اس کے علاوہ ہانگ کانگ میں چین کی جانب سے متنازع سکیورٹی قانون کا نفاذ بھی دونوں ممالک کے درمیان اختلافات کی ایک وجہ ہے۔
منگل کو امریکہ کے محکمۂ انصاف نے چین پر الزام لگایا تھا کہ وہ اُن ہیکروں کی مدد کر رہا ہے جو ایسی امریکی لیباریٹریوں پر حملے کر رہے ہیں جہاں کووڈ 19 کی ویکسین تیار کی جا رہی ہے۔ امریکہ میں دو چینی باشندوں پر فردِ جرم بھی عائد کی گئی ہے جنہوں نے مبینہ طور پر امریکہ کی میڈیکل کی تحقیقی کمپنیوں کی جاسوسی کی اور جنہیں دوسری وارداتوں میں چینی ایجنٹوں کی مدد حاصل رہی ہے۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.